پی ٹی آئی کے سابق اراکین اسمبلی کی نشستوں پر ضمنی انتخابات کا شیڈول جاری

پی ٹی آئی کے سابق اراکین اسمبلی کی نشستوں پر ضمنی انتخابات کا شیڈول جاری
الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے اعلان کیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے 25 ارکان صوبائی اسمبلی کے ڈی نوٹیفکیشن کے بعد پنجاب اسمبلی کی خالی ہونے والی 20 نشستوں پر ضمنی انتخابات 17 جولائی کو ہوں گے۔


رپورٹ کے مطابق ای سی پی کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ متعلقہ حلقوں کے ریٹرننگ افسران ضمنی انتخابات کا پبلک نوٹس 31 مئی کو جاری کریں گے اور کاغذات نامزدگی 4 سے 7 جون کے درمیان وصول کیے جائیں گے۔
نامزد امیدواروں کی فہرستیں 8 جون کو جاری کی جائیں گی اور کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال 11 جون تک ہوگی۔
ریٹرننگ افسران کی جانب سے کاغذات نامزدگی منظور یا مسترد کیے جانے کے خلاف اپیلیں دائر کرنے کی آخری تاریخ 15 جون ہوگی اور اپیلٹ ٹربیونل اسی روز اس کا فیصلہ کرے گا۔
الیکشن کمیشن کے نوٹیفکیشن کے مطابق امیدواروں کی نظرثانی شدہ فہرستیں 22 جون کو شائع کی جائیں گی اور امیدوار 23 جون تک کاغذات نامزدگی واپس لے سکتے ہیں جب کہ انتخابی نشانات 24 جون کو الیکشن لڑنے والے امیدواروں کو الاٹ کیے جائیں گے اور پولنگ 17 جولائی کو ہوگی۔
جن نشستوں پر ضمنی انتخابات ہوں گے ان میں پی پی 7 راولپنڈی-2، پی پی 83 خوشاب -2، پی پی 90 بھکر-2، پی پی 97 فیصل آباد-1، پی پی 125 جھنگ-2، پی پی 127 جھنگ 4، پی پی 140 شیخوپورہ-6، پی پی 158 لاہور-15، پی پی 167، 168 اور 170 لاہور 14 اور 16، پی پی 202 ساہیوال-7، پی ہی 217 ملتان-7، پی پی 224 لودھراں-1، پی پی 228 لودھراں 5، پپ 237 بہاولنگر-1، پی پی 272 اور 273 مظفرگڑھ-5، 6، پی پی 282 لیہ-3، اور پی پی 288 ڈیرہ غازی خان-4 شامل ہیں۔ واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے ان اراکین اسمبلی نے پنجاب اسمبلی میں پارٹی پالیسی کے خلاف جاتے ہوئے وزارت اعلیٰ کے انتخاب میں حمزہ شہباز کو ووٹ دیا تھا۔
خیال رہے 21 مارچ 2022 کو صدر مملکت عارف علوی نے اس وقت کے وزیرِ اعظم عمران خان کے مشورے پر آئین کے آرٹیکل 63 اے کے اغراض و مقاصد، اس کی وسعت اور دیگر متعلقہ امور پر سپریم کورٹ کی رائے طلب کرتے ہوئے صدارتی ریفرنس کی منظوری دی تھی۔
الیکشن کمیشن نے پاکستان تحریک انصاف کے 25 منحرف ارکان پنجاب اسمبلی کو ڈی سیٹ کردیا تھا جن میں مخصوص نشستوں پر کامیاب ہونے والی پانچ خواتین ارکان اسمبلی بھی شامل تھیں۔
بعد ازاں 18 مئی 2022 کو سپریم کورٹ نے آرٹیکل 63 اے کی تشریح سے متعلق صدارتی ریفرنس پر فیصلے میں کہا ہے کہ منحرف رکن اسمبلی کا پارٹی پالیسی کے برخلاف دیا گیا ووٹ شمار نہیں ہوگا
سپریم کورٹ کی جانب سے آرٹیکل 63 اے کی تشریح کی روشنی میں اس فیصلے کے 2 روز بعد 20 مئی کو الیکشن کمیشن نے پنجاب کے وزیر اعلیٰ کے انتخاب میں حمزہ شہباز کو ووٹ دینے والے پی ٹی آئی کے 25 منحرف اراکین صوبائی اسمبلی کے خلاف ریفرنس منظور کرتے ہوئے انہیں ڈی سیٹ کردیا تھا۔
بعد ازاں 23 مئی 2022 کو الیکشن کمیشن نے وزیر اعلیٰ کے انتخاب میں پی ٹی آئی کے نامزد امیدوار چوہدری پرویز الہٰی کے بجائے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار حمزہ شہباز کی حمایت میں ووٹ دینے والے پی ٹی آئی کے 25 منحرف اراکین کی صوبائی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کا باقاعدہ نوٹی فکیشن بھی جاری کردیا تھا۔
خیال رہے آئین کے آرٹیکل 63 اے کے مطابق کسی رکن پارلیمنٹ کو انحراف کی بنیاد پر نااہل قرار دیا جا سکتا ہے، اس کارروائی کے لیے پارٹی کا سربراہ اسپیکر صوبائی اسمبلی اور اسپیکر الیکشن کمیشن کو ریفرنس بھیجتا ہے، جس کے بعد الیکشن کمیشن منحرف رکن کی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کا اختیار رکھتا ہے۔